peperonity.net
Welcome, guest. You are not logged in.
Log in or join for free!
 
Stay logged in
Forgot login details?

Login
Stay logged in

For free!
Get started!

Guestbook


maa aur qanoon - Newest pictures
a--------urdu.duniya.in.peperonity.net

✵ ماں اور قانون ✵

✿ علم و عمل ✿

ایک بوڑھے بیٹے کا حیران کن مقدمہ سعودی عرب کے شہر بریدہ کے لوگ اور عدالت دونوں کے لیے فیصلہ دشوار ہی نہیں دو بھر ہوگیا تھا

سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض سے ایک روزنامہ نکلتا ہے۔
شہر ریاض ہی کی نسبت سے اس کا نام روزنامہ ’’ریاض‘‘ ہے۔

اخبار کے مطابق دو بھائیوں کے درمیان جھگڑے کا مقدمہ اس قدر سنگین صورت اختیار کرگیا کہ اس کا فیصلہ پنچایت میں نہیں ہوسکا، بلکہ مقدمہ ہائی کورٹ تک پہنچ گیا۔ دراصل یہ مقدمہ بالکل نرالی نوعیت کا تھا، اس لیے بہت سے عربی ا خبارات نے اسے نمایاں سرخیوں کے ساتھ شائع کیا۔ ہم روزنامہ ’’ الریاض‘‘ کے حوالے سے واقعے کا خلاصہ قارئین کرام کی خدمت میں پیش کررہے ہیں۔

اس کا نام حیزان تھا۔ سعودی عرب کے معروف شہر ’’ بریدہ‘‘ سے 90 کلو میٹر کے فاصلے پر ’’ اَسیاح‘‘ نامی ایک بستی ہے۔ حیزان نامی بوڑھا اسی بستی کا رہنے والا تھا۔ جب مقدمہ بائی کورٹ پہنچا تو وہ بوڑھا شخص لوگوں سے کھچاکھچ بھری ہوئی عدالت میں اس قدر رویا کہ اس کے آنسوئوں سے اس کی داڑھی بھیگ گئی، آخر کیوں؟

اس بوڑھے نے بھری عدالت میں لوگوں کے سامنے آنسو کیوں بہائے؟ کیا اس لیے کہ اس کے بیٹوں نے اس کے ساتھ ناروا سلوک کیاتھا؟ کیا اس لیے کہ زمین کے کسی مقدمے میں اس کی ہار ہونے والی تھی؟ یا اس لیے کہ اس کی بیوی نے اس عمر میں اس پر خلع کا مقدمہ دائر کردیا تھا؟

جی نہیں، ان میں سے کوئی بھی وجہ نہیں تھی۔ دراصل وہ بھائی کے مقابلے میں اپنی ماں کا مقدمہ ہارنے کی وجہ سے تڑپ رہاتھا۔ اس ماں کا مقدمہ، جس کے پاس پیتل کی ایک انگوٹھی کے علاوہ کچھ نہیں تھا۔

یہ بڑھیا اپنے بڑے بیٹے حیزان کے ساتھ رہتی تھی۔ حیزان اپنی ماں کے ساتھ انتہائی حسن سلوک سے پیش آتا۔ حتی المقدور اس کی خدمت کرتا تھا۔ بوڑھی ماں بھی اس کے ساتھ خوش تھی۔ جب حیزان کی عمر زیادہ ہوگئی، ایک دن اس کا چھوٹا بھائی اس کے گھر آیا۔ وہ دوسرے شہر میں رہتا تھا۔ اس نے بڑے بھائی کے سامنے یہ تجویز رکھی کہ آج کے بعد ماں اس کے ساتھ رہے گی۔ اس نے اعلان کیا کہ وہ شہر سے ماں کو لے جانے کے لیے ہی آیا ہے۔

یہ بات حیزان کے لیے بہت تکلیف دہ تھی۔ وہ کہنے لگا: بھائی! اگرچہ میں بوڑھا ہوچکا ہوں اور تم میرا بڑھاپا دیکھ کر یہ سمجھ رہے ہو کہ میں اپنی والدہ کی اچھی طرح خدمت نہیں کرسکوں گا، لیکن تمہیں ...


This page:




Help/FAQ | Terms | Imprint
Home People Pictures Videos Sites Blogs Chat
Top
.